مظفر نگر: اترپردیش کی مقبول ترین دینی درس گاہ درالعلوم دیو بند نے ہجومی تشدد پر آر ایس ایس سربراہ موہن بھگوات کے اس بیان کی ستائش کی جس میں انھوں نے کہاتھا ”اگر ان کا کوئی والینٹر ہجومی تشدد کے واقعات میں ملوث پایاجاتا ہے تو اس سے ہم قطع تعلق کا اظہار کرنے میں کوئی ہچکچاہٹ محسوس نہیں کریں گے“۔ بیان پڑھ کر سناتے ہوئے درالعلوم کے وائس چانسلر مولانا عبدالقاسم نعمانی نے چہار شنبہ کے روز رپورٹرس سے کہاکہ ”ہجومی تشدد کے خلاف آر ایس ایس چیف کے بیان کا خیر مقدم کیاجانا چاہئے۔ مگر مذمت کرنا یا پھر اس طرح کے واقعات کی حمایت نہیں کرنا کافی نہیں ہے۔ یہاں پر ایک قانون کی ضرورت ہے تاکہ ہجومی تشدد کے واقعات کو روکا جاسکے“۔ جمعیت العلماء ہند(جے یو ایچ) کے صدر مولانا سید ارشد مدنی جنھوں نے آر ایس ایس لیڈر کے ساتھ حال ہی میں ملاقات کرتے ہوئے مختلف مسائل پر بات کی جس میں ہجومی تشدد بھی شامل ہے، نے آر ایس ایس سربراہ کے اعلان کی ستائش کی۔مولانامدنی نے کہاکہ ”سن کر بہت اچھا لگا“۔