پٹنہ، 28 اکتوبر(اے یوایس) بہار میں پہلے مرحلہ کی 71 اسمبلی سیٹوں کیلئے ووٹنگ صبح سات بجے سے جاری ہے، جو شام چھ بجے تک جاری رہے گی۔ خبروں کے مطابق صبح 11 بجے تک کل 18.37 فیصد ووٹنگ ہوئی ہے۔ کورونا کی وجہ سے لوگ گھروں سے نکل تو رہے ہیں، مگر ان میں ایک خوف کا ماحول ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی، راہل گاندھی، نتیش کمار اور تیجسوی یادو سمیت کئی بڑے لیڈروں نے زیادہ سے زیادہ ووٹ دینے کی اپیل کی ہے۔ پہلے مرحلہ میں 71 سیٹوں پر کل 1066 امیدوار میدان میں ہیں،

جن میں 114 خواتین امیدوار شامل ہیں۔پہلے مرحلہ میں ا?ر جے ڈی کے 42 تو جے ڈی یو کے 35 امیدواروں کے علاوہ بی جے پی کے 29، کانگریس کے 21، لیفٹ پارٹیوں کے ا?ٹھ، ہندوستانی عوامی مورچہ کے چھ اور وکاس شیل انسان پارٹی کے ایک امیدوار انتخابی میدان میں ہیں۔ علاوہ ازیں ایل جے پی کے بھی 42 امیدواروں کی قسمت کا فیصلہ اس مرحلہ کی ووٹنگ میں طے ہوگا۔آج جن وزرا کی قسمت ای وی ایم میں بند ہوگی، ان میں بہار کے وزیر زراعت اور بی جے پی لیڈر ڈ?اکٹر پریم کمار، جے ڈی یو لیڈر اور بہار کے وزیر تعلیم کرشن نندن ورما، بی جے پی لے لیڈر اور وزیر وجے کمار سنہا، برج کشور بند، جے ڈی یو لیڈر سنتوش کمار نرالا، جے ڈی یو لیڈر سیلیش کمار، جے کمار سنگھ اور رام نارائن منڈل کے نام شامل ہیں۔

بہار میں کل 7.29 کروڑ ووٹرس ہیں۔ پہلے مرحلہ کی جن 71 سیٹوں پر ا?ج ووٹنگ ہورہی ہے، وہاں 2.14 کروڑ سے زیادہ ووٹرس ہیں۔ واضح رہے کہ بہار کے انتخابی دنگل میں این ڈی اے اتحاد کا مہاگٹھ بندھن سے براہ راست مقابلہ ہے۔ این ڈی اے میں بی جے پی، جے ڈی یو، ہندوستانی عوام مورچہ، وکاس شیل انسان پارٹی شامل ہیں۔ وہیں مہاگٹھ بندھن میں راشٹریہ جنتادل، کانگریس اور لیفٹ پارٹیاں شامل ہیں۔ مرکز میں این ڈی اے کی ساتھی لوک جن شکتی پارٹی بہار میں الگ ہوکر الیکشن لڑ رہی ہے۔