نئی دہلی،24جنوری(اے یو ایس)شمالی ہندوستانی سمیت ملک کی مختلف ریاستوں ٹھنڈ سے لوگ بے حال ہیں۔ دارالحکومت دہلی میں بھی پارے میں بھی کمی دیکھنے کو مل رہی ہے۔آج صبح سے ہی دہلی کہرے کی چادر میں لپٹی نظر آئی۔ہندوستانی محکمہئ موسمیات کے مطابق دہلی میں درجہئ حرارت اگلے چند دنوں میں درجہئ حرارت میں مزیدگراوٹ ریکارڈ کی جا سکتی ہے۔

درجہئ حرارت چار ڈگری سیلسیس تک جا سکتا ہے۔دریں اثناء پہاڑی ریاستوں میں برفباری کے سبب سردی میں اضافہ ہوا ہے۔ جموں و کشمیر میں برفباری سے سیاحوں کی آمد میں اضافہ ہوا ہے۔جموں وکشمیر میں زیادہ اونچائی والے علاقوں میں ایک بار پھرسے برفباری ہونے کے بعد 270 کلومیٹر طویل جموں۔

سری نگر قومی شاہراہ پر ٹریفک رک گیا تھا۔ سری نگر قومی شاہراہ پر ٹریفک کا ہفتہ کو بند کردیاگیا۔وادی کشمیر میں جواہر سرنگ کے دونوں اطراف برف باری ہوئی ہے۔پولیس ڈپٹی سپرنٹنڈنٹ شمشیر سنگھ نے کہا کہ جواہر سرنگ کے دونوں جانب سڑک کافی پھسل رہی ہے، جس کے بعد گاڑیوں کی نقل و حرکت11 بجے بند کر دیا گیا تھا۔ہفتہ کی صبح جواہر سرنگ کے دونوں طرف برفباری شروع ہوئی ہے اور زمین پر اب بھی چار انچ موٹی برف جمی ہوئی ہے۔افسر نے بتایا کہ بارڈر روٹس آرگنائزیشن نے سڑک سے برف ہٹانے کے کام میں اپنے کارکنان کو لگایا ہے۔

لیکن مسلسل برفباری اور پھسلن کی وجہ سے اس کام میں رکاوٹ ڈالی جارہی ہے۔ گاڑیوں کی آمد و رفت روکنے سے قبل تقریباً 100 گاڑیاں سرنگ کو عبور کرنے میں کامیاب رہے۔ جموں وکشمیر کو سبھی موسم میں سڑک کے ذریعہ ملک کے تمام حصوں سے جوڑنے والا یہ واحد راستہ ہے۔دوسری جانب راجستھان کے بیشتر علاقوں میں پچھلے کچھ دنوں میں درجہئ حرارت میں اضافے کے باعث جہاں لوگوں کو راحت ملی ہے وہیں محکمہئ موسمیات کا کہنا ہے کہ اگلے دو دن میں درجہئ حرارت میں دو سے چار ڈگری کی کمی واقع ہوسکتی ہے اور شدید سردی ہوسکتی ہے۔ محکمہ نے ہفتے کو کئی اضلاع میں سردی کی لہر اور دھند کی وارننگ جاری کی گئی ہے