8 Views

واشنگٹن،18اکتوبر(اے یوایس) وائٹ ہاؤس کے نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر رابرٹ اوبرائن نے کہا ہے کہ تائیوان کو چین کے کسی بھی حملے کے دفاع کے لیے تیار رہنا چاہیے۔جمعے کو ایک بیان میں نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر رابرٹ اوبرائن?نے کہا کہ ان کے خیال میں تائیوان کو ایسے قلعہ بند ہونا چاہیے کہ وہ چین کی جانب سے کسی بھی بحری حملے یا گرے زون کے ا?پریشن کا بھی دفاع کر سکے۔ان کا کہنا تھا کہ گرے زون آپریشن سے مراد جزیرے کو معاشی طور پر اکیلا کر دینا ہے۔ اس سے مراد ایسے جابرانہ اقدامات ہیں جن کے لیے فوجی طاقت استعمال نہ کی گئی ہو۔

خبر رساں ادارے ‘رائٹرز’ کے مطابق کچھ تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ اگر امریکی صدارتی انتخاب کے نتیجے میں ملک میں سیاسی انتشار کی کیفیت پیدا ہوئی تو چین تائیوان کے خلاف اقدامات اٹھا سکتا ہے۔چین کا یہ دیرینہ مؤقف رہا ہے کہ تائیوان چین کا حصہ ہے اور وہ اسے متحد کرنے کے لیے کوئی بھی طریقہ اپنا سکتا ہے۔ جب کہ وہ اس کے لیے طاقت کا استعمال بھی کر سکتا ہے۔نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر نے یہ بھی واضح کیا کہ ان کا نہیں خیال کہ چین تائیوان کے خلاف سمندری حملہ کرنے کے لیے تیار ہے یا وہ ایسا چاہتا ہے۔رابرٹ اوبرائن کے مطابق یہ چین کے لیے بہت مشکل آپریشن ہو گا۔ بیجنگ کو یہ دیکھنا پڑے گا کہ امریکہ ایسے میں کیا ردِ عمل ظاہر کرے گا۔