یہاں تم بھی نہیں ھو
—————
نہ سر پہ آسماں ھے
نہ نیچے پاؤں کے کوئی زمیں ھے
ندی کیا, پیڑ کیا
چڑیوں کا سر دھننا چہکنا کیا
خموشی شور میں پنہاں
یہاں پسری ہوئی ھے
ستاروں کا چمکنا
کسی سیّار ثابت کا ہمکنا کیا
اندھیرا روشنی کے جسم میں پیوست
خوش منظر
سمن زاروں کے سر پہ ہاتھ رکّھےناچتا ھے
رواں انبوہ غم زدگاں
کہ گریوں پر گزارا کر رہا ھے
کوئی اک بھیڑ دہشت ناک ہانکا کر رہی ھے
سیہ دریا سی کالی رات
جھر جھر شور کرتی بہہ رہی ھے
پرندے
اپنی منقاروں میں چہکاروں کو روکے
بھرے ہیں تھرتھری سے گھونسلوں میں
خلا بھی کیا
بس اک نقطہ سیاہی کا
جو اپنی ایک لامحدود وسعت میں
یہاں پھیلا ھوا ھے
یہاں تم بھی نہیں ھو

عجب اک کرب سے دوچار کوئی
پھڑپھڑاتا ھے
بدن مٹی کے پنجڑے میں
سیہ کینوس سے پھیلے آسماں پر
حسین اجلے پرندوں کی قطاریں
اور
ترنّم ریز لہرو میں سنی خوش منظری
تصویر کرنے کو
تمہارے چشم کوزوں سے
اجالا اک ذرا لے کر
یہاں
تم بھی نہیں ھو