تم پوچھ رہی ہو کہ آخر کب تک
اور آخر کتنی نظمیں
میں تمہارے لیے لکھوں گا؟
تم نے میری جو سکیچ بنائی ہے
اس میں جتنی لکیریں
تم نے کھینچی ہیں
اس ہر لکیر کے بدلے میں
تمہارے لیے ایک نظم لکھوں گا۔
لیکن ایک مشکل درپیش ہوگی
ساری لکیروں کے بدلے میں
نظمیں لکھ دینے کے بعد بھی
میں تمہارے لیے
مزید نظمیں بھی لکھوں گا
کیونکہ میں نے ہر لکیر کے اوپر
کئی اور لکیریں دریافت کی ہیں۔