تابوت میں ہمبستری

تمہیں وہ تابوت تو یاد ہوگا
جسے چور چھوڑ گئے تھے
تمہارے دادا کی لاش
جب چوری ہوئی
وہ کھلا تابوت برسوں
تمہارے گھر کی چھت پر پڑا رہا
تم مزاق میں کہتی تھی
جب دادی مرجائے گی
تو یہ اس کے کام ائے گا
مگر ایک شام
وہ ہمارے کام آیا تھا
ہم نے پہلی بار ہمبستری
اسی تابوت میں کی تھی۔