ربیع  الاول  امیدوں  کی  دنیا  ساتھ  لے   آیا
دعاؤں  کی   قبولیت   کو   ہاتھوں   ہاتھ  لیا
خدا نے ناخدائی کی خود  انسانی  سفینے کی
کہ رحمت بنکے چھائی بارہویں شب اس مہینے کی
خلیل اللہ نے جن کے لیے حق سے  دعائیں  کی
ذبیح اللہ نے وقت ذبح جس کی التجائیں  کی
جو بن کر روشنی پھر بھی دیدۂ یعقوب میں آیا
جسے یوسف نے اپنے حسن کے نئے رنگ میں پایا
ابھی جبریل اترے بھی نہ تھے کعبے کے ممبر سے
کہ اتنے  میں  صداآئی  یہ  عبداللہ  کے  گھر  سے
بصد  انداز   یکتائی    بغایت    شان    زیبائی
آمین  بن  کر  امانت  آمنہ  کی‌ گود  میں  آئی
فرشتوں کی سلامی دینے والی فوج گاتی تھی
جناب  آمنہ   سنتی   تھی   یہ  آواز  آتی  تھی
مبارک ہو  کہ  ختم المرسلیں  تشریف  لے  آئے
جناب   رحمۃ  اللعالمین    تشریف     لے    آئے
سلام اے آمنہ  کے  لعل اے  محبوب  سبحانی
سلام اے فخر  موجودات  فخر  نوع  انسانی
سلام  اے   آتش  زنجیر    باطل   توڑنے   والے
سلام اے خاک کے ٹوٹے ہوئے دل  جوڑنے  والے
سلام ان پر کہ جس نے گالیاں سن کر دعائیں کی
سلام ان پر کہ جس نے بادشاہی میں فقیری کی
جہاں  تاریک  تھا  ظلمت  کدہ تھا سخت کالا تھا
کوئی پردےسےکیا نکلا کہ گھر گھر میں اجالاتھا
جہاں میں جشن صبح عید  کا سامان  ہوتا  تھا
ادھر  شیطان  تنہا  اپنی  ناکامی  پہ  روتا   تھا
تیرا در ہو میرا سر ہو میرا دل ہو تیرا گھر ہو
تمنا  مختصر  سی  ہے  مگر   تمہید   طولانی
مبارک  ہو  مبارک  ہو  مبارک  ہو   مبارک  ہو
مبارک  عید  میلاد  النبی  کا  پھر  پیام‌   آیا